یوم اقبال کی اردو میں شاعری 2021، 9 نومبر شایری

یوم اقبال کی اردو میں شاعری 2021، 9 نومبر شایری

Spread the love

9 نومبر پاکستان کے قومی شاعر محمد اقبال کا یوم پیدائش ہے۔ علامہ اقبال ڈے ہر سال 9 نومبر کو ہمارے عظیم شاعر کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے منایا جاتا ہے۔ اس دن کو مزید یادگار اور پرجوش بناتے ہوئے 9 نومبر کے یوم اقبال کی بہترین شاعری اپنے دوستوں اور اہل خانہ کے ساتھ اردو میں شیئر کریں۔

“نکالا ہم کو جنت سے فریب زندگی دئے کیر
دیا پھر شوک جنت کیوں یہ ہیرانی نہیں جاتی”

امل سے زندگی بنٹی ہے جنت بھی جہاں بھی
ہاں خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

پیارے عشق میں اپنا مقام پیڈا کر
نیا زمانہ نیا سبھا شام پیڈا کر”

“کہاں سے تو نہیں آئے اقبال، سکھی ہے یہ درویشی
کے چرچہ بادشاہو میں ہے تیری بینیازی کا”

“بات سجادو کی نہیں کھلوس کی ہوتی ہے اقبال
اس کے میخانے میں شرابی اور اس کی مسجد میں نمازی نہیں ہوتا”

“تیری رحمت پہ منھاسر، میرے اس کے عمل کی قبولیت
نہ مجھے سلیقہ اِلتجا، نہ مجھے شہرِ نماز ہے‘‘

’’میرے بچپن کے دن بھی کیا خوب تھا اقبال
بے نمازی بھی تھا اور بی گنہ بھی”

’’نہ تو زمین کے جھوٹ ہے نہ اسماء کے جھوٹ
جہاں ہے تیرے جھوٹ تو نہ جہاں کے جھوٹ

“کیون مانتین مانگتا ہے اورو کے دربار سے اقبال
وو کون سا کام ہے جو ہوتا نہ تیرے پردیگر سے”

دل کی امارت میں کہیں بندگی نہیں
پاتھر کی مسجد میں خدا دھونڈتے ہیں لاگ”

تیرے آزاد بندو کی نہ یہ دنیا نہ دنیا اقبال
یہاں مرنے کی پبندی، وہیں جن کی پباندی”

“تو شاہین ہے پرویز ہے کام تیرا”
تیرے جیسے اسماء اور بھی ہیں”

“خواہشاں بادشاہو کو غلام بنا لیتی ہیں”
میجر صابر غلام کو بادشاہ بنا دیتا ہے”

“سر جھکانے سے نمازیوں اڈا نہیں ہوتی
دل جھکانا پرتا ہے عبادت کے جھوٹ

اقبال تیری قوم کا اقبال کھو گیا
مازی تو سنہرا ہے میرا حال کھو گیا

Leave a Comment

Your email address will not be published.